Song no:

1

Volume no:

1

Poet Name:

Bashir Choudhry

Company:

RGH

Song Name:

Tum Ko Shorat Ho Mubarak

چشمِ  ساقی  سے  طلب  کر  کے  گلابی  ڈورے
دل  کے زخموں  کو کہیں بیٹھ  کر سی لیتا ہوں
ساغرِ  مہ  تو  بڑی   چیز  ہے  اِک   نعمت  ہے
اَشک  بھی آنکھ میں بھر  آہیں  تو  پی  لیتا  ہوں

ذکر  جب  چِھٹر   گیا   اُن   کی   انگڑائی   کا
میری  نظر  کو   جنون   کا   پیام   دِے   ساقیا
میری   حیات   کو   لافانی   شام   دے   ساقیا
یہ روز  روز  کا   پینا    مجھے    پَسند   نہیں
کبھی  نہ  ہوش  میں  آوُں  وہ  جام  دے  ساقی

 

ذِکر  جب   چِھٹر  گیا   اُنکی   اَنگڑائی  کا  شاخ  سے  پھول  یوں  ٹوٹ  کر  یوں  گر  پڑے

جیسے   دلہن    کوئی    پیار   کی   گود   میں  زندگی    کی   مزے لوٹ  کر   گر   پڑے


ہوتی    نہیں    و فا    تو   جفا   ہی   کیا   کرو
تم  بھی    تو   کو ئی    رسمِ    محبت    اَدا  کرو
ہم  تم  پہ   مر  مِٹے  تو   یہ   کِس  کا  قصور  ہے
آہینہ   لے   کے   ہاتھ    میں  خود   فیصلہ   کرو
اَب  اُن  پہ   کو ئی  بات   کا   ہوتا     نہیں    اَثر
مِنت    کَرو     سوال      کر و      اِلتجا   کرو
شرمندہ   ہوں  کہ  موت   بھی   آتی   نہیں  مُجھے
تم  میرے    لیے    اَب   تو    کوئی    بَدُعا  کرو
بیٹھو    نہ   محفلوں   میں   زمانہ    خراب   ہے
دِیکھو    ہماری    بات    کَبھی    سُن   لِیا  کرو
شَاید  کبھی  تو  دیکھے  گا  وہ  تم  کو  جھانک  کر
اُس  کی   گلی    میں   روز   تماشا    کیا   کرو

حُسن  والوں  کی  گَلیوں  سے   میت   میری    رَکھ   کے  کاندھے  پہ  جِس  دَم  اُٹھائی  گئی
کَنگیاں   گسیوں   میں    پھنسی     رہ   گئی  آہینے   ہاتھ   سے   چُوٹ   کر   گِر   پڑے

 

مُجھ  کو  دِیوانہ   سمجھتے   ہیں   تیرے   شہر   کے   لوگ
مِیرے  دَامن  سے  اُلجھتے  ہیں  تیرے  شہر   کے  لوگ
اور کِیا  دُوں   میں    تُجھے   اَپنی   وفاوں  کا  ثبوت
اَب  میرے  حال  پہ ہنستے  ہیں  تیرے  شہر  کے  لوگ
میں   گیا     وقت   ہوں    وَاپِس    نہیں  آنا   والا
کیوں   میرا  رَستہ  تَکتے   ہیں   تیرے   شہر   کے  لوگ
دل  کی   باتوں   کو    لَب   پہ    نہیں    لاتے   لِیکن
مُجھ  پِہ  آوا ز   تو  کستے  ہیں   تیرے  شہر  کے  لوگ

مِیرے  محبوب   نے  مُسکراتے  ہوئے  جب   نِقا ب  اَپنے  چہرے  سے  سِرکا   دیا
چودھویں  رات  کا چاند  شرما   گیِا  جِتنے  تارے  تھے  سب  ٹوٹ  کر  گِر  پڑے

 

تو   نے   میخانہ  نگاہوں   میں  چُھپا   رَکھا   ہے
ہوش   والوں  کو  بھی   دِیوانہ   بنا   رکھا   ہے
ناز  کیسے   نہ  کروں    بندہ   نوازی   پہ   تیری
مجھ   نا   چیز کو  جَب   اَپنا    بنا  رَکھا    ہے
ہر  قدم  سَجدے  پہ  صَد   شُوق  کیا  کرتے  ہیں
ہم  نے  کعبہ  تیرے  کوچے   میں  بنا  رکھا   ہے
اِے  میرے  پرد ہ  نشین   تیری   توجہ   کے   نثار
میں  نے   دنیا   سے  تیرا  عشق   چھپا  رکھا   ہے
جو  بھی  غم   مِلتا  ہے سینے سے  لگا   لیتا  ہوں
میں  نے  ہر  درد   کو   تقدیر   بِنا   رَکھا   ہے
بخش  کر  آپ  نے  اِحساس  کی  دُولت  مُجھ  کو
یہ   بھی   کیا  کم    ہے   اِنسان   بنا   رکھا  ہے
کیا بتاوں  کہ مایوُس  آنسُو  میرے  کس  طرح  ٹوٹ  کر  زیبِ  دامان   ہوئے
نرم    بِستر  پہ  جیسے  کوئی   گُلبدن  اَپنے  محبوب  سے  روٹ  کر  گر  پڑئے

 

اپنے  چہرے پہ  زُلفیں  بکھیرے  ہوئے  حالِ  دِل  وہ  مُجھ  سے  پُوچھنے  آئے  تھے
کِتنے  لوگوں  کی  نیت  میں  بال  آ گے  کِتنے جام ہاتھ  سے  چھوٹ  کر  گِر  پڑئے