Song no:

5

Volume no:

6

Poet Name:

Ishrat Gohdervi

Company:

Sonic

Song Name:

Meri Barbadi Ka Ab

راستہ   کاٹ   کے   ہر  بار   گذر   جاتا   ہے
جیسے    پردیس    میں    تہوار   گزر  جاتا  ہے

زندگی  عشق  میں  یوں  گذری  ہے   اپنی  دانشؔ
جیسے   بازار  سے    نادار    گذر     جاتا   ہے


میری     بربادی    کا   اَب   جشن   مناؤ   یارو
گھر    میرا    سامنے   میرے   ہی   جلاؤ   یارو


اِتنی شدت سے تو  برسات  بھی  کم  کم برسے
جِس طرح آنکھ تیری یاد میں  چھم  چھم برسے

منتیں  کون  کرے  ایک   گروندے   کے   لیے
کہہ دو بادل سے برستا  ہے تو چھم چھم  برسے

تم  کو  معلوم   ہے   آئے   گا   نہ   قاتل  میرا
دیر  کیوں  کرتے   ہو   میت  کو   اُٹھاؤ   یارو

 

رہتا   نہیں   اِنسان    تو    ہوتا    نہیں   غم   بھی
ایک  روز  زمین  اوڑ ھ  کے  سو  جاہیں  گے  ہم  بھی

ہاں   حلفِ     وفا     شوق    سے    اُٹھواو    لیکن
ہم   لوگ    وفادار   ہیں   بے   قول و قسم    بھی

ظلم   کی    حد  سے    گذر  کر  مجھے  پتھر  مارو
ہو    سکے   تو   میری  ہستی    کو    مٹا ؤ   یاو

شعار     ٹھیک    نہیں    یہ    آدمی     کیلئے
کہ  دل  کسی  کے  لیے  ہو  اور  زبان  کسی  کیلئے 

نہ  اعتبا ر   وفا   کر   کے    وہ    نگاہِ   شریر
کبھی     کسی    کیلئے     کبھی  کسی    کیلئے

دُشمنوں   نے   جو   جلائی   ہیں   لحد   پر   میری
وہ    شمع   آخری    سب   مل   کے   بجاؤ   یارو