Song no:

6

Volume no:

57

Poet Name:

Mics

Company:

PMC

Song Name:

Main Shahrabi Hoon Mujay Pyar Hai

نصیب   چین   کی    اِک    دِن    زندگی  نہ   ہوئی
خوشی   کی   آس   لگائے   رہے  خوشی    نہ   ہوئی

وہ    بدنصیب  شجر   ہوں   میں   باغِ   اُلفت  کا
کہ جِس کی شاخ جو  سُوکھی  تو پھر  ہری  نہ  ہوئی

 

روز        ٹانکے       اُدھیرے      جاتے     ہیں 
روز    زخمِ      جگر   کو    سیتا       ہوں

جانے    کیوں      لوگ   پڑنا       چاہتے    ہیں 
میں   نہ    قرآن   ہوں   نہ     گیتا     ہوں


میں  شرابی  ہوں  مجھے   پیار   ہے   آخر   کیوں    ہے

میں  تو  آوارہ   ہوں    دیوانہ    ہوں    سودائی    ہوں
چلتی     پھرتی    ہوئی    رسوائی     ہی    رسوائی  ہوں

سانس    لینا    مجھے    دشوار   ہے   آخر   کیوں  ہے
میں  شرابی  ہوں  مجھے   پیار   ہے   آخر   کیوں    ہے

 

خود   کشی  کیلئے  ر  روز   زہر    پیتا     ہوں
سب کی سن لیتا  ہوں  دُکھ سہتا ہوں اور جیتا ہوں

زندگی   میری    گناہگار   ہے   آخر    کیوں     ہے
میں شرابی  ہوں  مجھے  پیار   ہے  آخر  کیوں    ہے


میں  ہوں  مجبور  تم  کہتا ہوں  مجبور   نہ   ہو
مت   قریب   آؤ    شرابی   سے   ذرا   دُور    رہو

زندگی     میری    گناہگار     ہے   آخر  کیوں   ہے
میں  شرابی  ہوں  مجھے  پیار  ہے  آخر  کیوں   ہے


کِس  قدر  دَرد میں   ڈوبی   ہے   کہانی    میری
مسکراہٹ    کو  ترستی   ہے    جوانی      میری

جو  بھی  اپنا  ہے بے  زار  ہے   آخر  کیوں  ہے
میں  شرابی  ہوں  مجھے  پیار ہے آخر کیوں   ہے