Song no:

11

Volume no:

33

Poet Name:

Hakeem Nasir

Company:

PMC

Song Name:

Jab Say Too Ne Mujay Dewana

جب   سے  تُو   نے    مجھے    دیوانہ     بنا     رکھا    ہے
سنگ   ہر   شخص    نے   ہاتھوں   میں   اُٹھا   رکھا    ہے


اُس  کے  دل  پر  بھی  کھڑی  عشق  میں  گذری  ہو  گی
نام     جِس   نے     بھی    محبت    کا   سزا   رکھا   ہے


پتھرو   آ ج    میرے    سر    پہ    برستے    کیوں     ہو
میں    نے    تُم   کو    بھی   کبھی   اَپنا   خدا   رکھا  ہے


اب    میرے     دید    کی    دُنیا    بھی   تماشائی   ہے
تُو   نے  کیا   مُجھ   کو   محبت   میں   بنا   رکھا   ہے


جِس  کی  اِک   چوٹ   سے   یزداں  کا  پگھل  جائے  لہو
ہم    نے  وہ  درد   بھی   سینے  میں  چھپا   رکھا   ہے


جِس    کی   آواز  نے   انسان    کا    سکون   چھین   لی
وقت   بے   رحم   نے   وہ      ساز     اُٹھا    رکھا    ہے


دور    کے    چاند    سے    مٹی    کا    دیا     ہی   بہتر
جو    غریبوں    نے   سر   شام      اُٹھا     رکھا     ہے


تُو   نے   تو     ہاتھ    میرے   ہاتھ   پہ  آ   رکھا    ہے
میں   نے   کوھسا ر   ہتھیلی    پہ   اُٹھا     رکھا     ہے


پی     جا    ایام   لی   تلخی   کو   بھی   ہس   کر    ناصرؔ
غم  کو  سہنے  میں  بھی  قدرت   نے    مزہ   رکھا    ہے