Song no:

10

Volume no:

58

Poet Name:

S M Sadiq

Company:

PMC

Song Name:

Kohay Kohay Rehtay Ho

اَب  کی  دفعہ   وہ    رو   پڑئے  گا  ویراں   کاغذ   دیکھ  کر
آخری    خط   میں   اُسے    میں  نے  لکھا  کُچھ  بھی   نہیں
بِکھری   بِکھری    زُلفیں   رُخ    پر   اور  پسینہ     ماتھے  پر
سچ  تو  یہ  ہے  کہ  تُم  غصے  میں اور  بھی  پیارے لگتے  ہو
کروٹ   کروٹ   چُبتھا   بستر    سانس  سانس  میں    انگڑائی
کِس   کو   اپنی   نیندیں  دے  دی   جاگے   جاگے   لگتے   ہو

کھو ئے   کھوئے   رہتے  ہو   اُلجھے    اُلجھے   لگتے    ہو
پہلے   جیسے   آج    نہیں    تُم    بدلے    بدلے    لگتے  ہو


کوئی  بھی  لیکن  میری  طرح  نہ  ٹوٹ  کے  تُجھکو  چاہیے  گا
یوں  تو   ہر   ایک  دیکھنے   والے   کو تُم  اچھے   لگتے  ہو


میرے  نظر  کا    دھوکا   ہے   یا   جادو  آپ  کے  جلووں  کا
جانتا    ہوں   تُم  غیر  ہو  لیکن    پھر  بھی  اپنے  لگتے  ہو


پوچھ  کے  دیکھے  ہم  سے  کوئی  کِس درجہ چالاک  ہو  تُم
دیکھنے     والوں   کو   تُم  کتنے   بھولے   بھالے   لگتے   ہو


کِس   ظالم    نے   پھینک  دیا  ہے  آج   اَنا  کی  چوٹی  سے
کُچھ تو  کہوں  کیا بات ہوئی  ہے  بکھرے  بکھرے  لگتے  ہو


راہیں   تکناں   تارے   گنناں    صادقؔ    کام   ہمارا   ہے
آج  مگر   کیا  بات  ہے  تُم  بھی  جاگے   جاگے   لگتے   ہو